منطق

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ * لا الہٰ الا اللہ محمّد رسول اللہ * قُلْ هُوَ اللّـٰهُ اَحَدٌ - اَللَّـهُ الصَّمَدُ - لَمْ يَلِدْ وَلَمْ يُوْلَدْ - وَلَمْ يَكُنْ لَّـهٝ كُفُوًا اَحَدٌ

2017-07-02 12:22:25    42 Views ٭٭٭کائنات کی مقدس ترین ہستی٭٭٭  /  محمد اسحاق قریشی

٭٭٭کائنات کی مقدس ترین ہستی٭٭٭
وہ پیشے کے لحاظ سے نجار (لکڑی کے کاریگر) تھے ۔۔۔۔۔۔۔انتہائی شریف النفس اور اپنے کام سے کام رکھنے والے۔۔۔۔۔۔۔۔ صبح سویرے کام پر جاتے، دن بھر کی محنت مزدوری کے بعد شام کو واپس گھر ۔۔۔۔۔یہی ان کا روزانہ کا معمول تھا۔۔۔۔ ان دنوں برصغیر پر انگریزوں کی حکومت تھی ۔ انگریز اپنی حکمرانی کے نشے میں بدمست مسلمانوں پر ہر طرح کے ظلم و ستم ڈھا رہا تھا۔ دوسری طرف ہندو بنیا سیکڑوں برس کی غلامی کا بدلہ چکانے کے لیئے تیار بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جب انگریزوں اور ہندوؤں نے مسلما ن کو بے بس سمجھ لیا تو انہوں نے اپنے خبث باطنی کا اظہار شروع کر دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مسلمانوں ہی کی نہیں بلکہ کائنات کی مقدس ترین ہستی پر زبان درازی کی جرآت کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہر سمت سے ہر روز نت نئی گستاخی کی خبروں نے عالم اسلام میں ہلچل برپا کر کے رکھ دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انہی دنوں ایک ہندو ملعون راجپال نے حضور اکرم ﷺ کی شان اقدس میں گستاخانہ کتاب لکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس کے نتیجے میں مسلمانوں میں اشتعال کی فضا پیدا ہو گئی۔۔۔۔ مسلمانوں نے راجپال ملعون کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا، جلسے جلوس ہوتے رہے ۔۔۔۔۔۔۔ مگر حکومت کے کانوں پر جوں تک نہ رینگی۔۔۔۔۔۔انہیں اس سارے طوفان کی کچھ خبر نہ تھی ۔۔۔۔ ایک دن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کام سے واپسی پر راستے میں ایک ہجوم دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ قریب گئے اور لوگوں سے دریافت کیا تو معلوم ہوا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ راجپال ملعون نے کائنات کی مقدس ترین ہستی کی شان میں گستاخی کی ہے ۔۔۔۔اور یہ اسی سلسلے میں جلسہ نکالا گیا ہے ۔۔۔ جلسے کے شرکاء کی تقاریر نے آپ کے دل پر انتہائی گہرا اثر کیا۔۔۔۔۔۔۔اس دن سے کام سے آپ کا دل اچاٹ ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔ اپنے پیارے نبی ﷺ کی شان میں گستاخی کا سن کر آپ کی راتوں کی نیند اڑ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس رات انہیں خواب میں ایک بزرگ کی بھی زیارت ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انہوں نے کہا: تمہارے نبی ﷺ کی شان اقدس میں گستاخی ہو رہی ہے اور تم سوئے ہوئے ہو۔ اٹھو اور جلدی کرو۔۔۔۔۔۔۔ وہ ہڑبڑا کر اٹھے اور سیدھے اپنے ایک دوست کے گھر پہنچے۔۔۔۔اسے بھی ویسا ہی خواب آیا تھا۔۔۔۔۔اور اسے بھی راجپال ملعون کو واصل جہنم کرنے کا حکم ملا تھا۔۔۔۔ دونوں ہی کی خواہش تھی کہ یہ سعادت انہیں حاصل ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کافی دیر بحث چلتی رہی ۔۔۔۔۔۔۔آخر قرعہ اندازی کی گئی تو نتیجہ ان کے حق میں نکلا۔۔۔۔۔۔۔۔چنانچہ و ہ راجپال ملعون کے دفتر گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہاں سے اس کے متعلق معلومات حاصل کیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو معلوم ہوا کہ وہ ملعون ابھی دفتر نہیں پہنچا۔۔۔۔۔ اتنے میں راجپال ملعون کار پر دفتر پہنچا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ معلوم ہونے پر کہ یہی راجپال ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ اس کے دفتر کے اندر داخل ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ راجپال ملعون نے آُ پ کو اندر آتے ہوئے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔مگر اس ملعون کو یہ خبر نہ تھی کہ آپ کی صورت میں موت اس کے قریب آ چکی ہے۔۔۔۔ آپ نے پلک جھپکتے ہی چھری نکالی۔۔۔۔۔ہاتھ فضا میں بلند ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور چھری سیدھی اس ملعون کے جگر پر لگی۔۔۔۔ ایک ہی وار کارگر ثابت ہوا ۔۔۔۔۔۔۔اور وہ ملعون واصل جہنم ہو گیا۔۔۔۔۔۔ آپ الٹے پاؤں باہر نکلے ۔۔۔اور اعلان کیا کہ اس ملعون نے چونکہ کائنات کی مقدس ترین ہستی کی شان اقدس میں گستاخانہ کتاب لکھی تھی ۔۔۔۔اس لیئے میں نے اسے واصل جہنم کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر کوئی اور بھی ایسا سوچنے کی جرات کرے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو اس کا بھی یہی انجام ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!! آپ کو گرفتار کر لیا گیا۔۔۔۔۔۔۔آ پ کے گھر والوں کو علم ہوا ۔۔۔۔۔۔تو وہ حیران ضرور ہوئے ۔۔۔۔مگر انہیں پتا چل گیا کہ ان کے نورچشم نے۔۔۔۔۔۔۔۔کیاکارنامہ سرانجام دیاہے۔۔۔۔۔۔۔۔گستاخ رسول ﷺ کوعلی الاعلان واصل جہنم کر کے ۔۔۔۔۔گستاخوں اوران کے سرپرستوں ۔۔۔۔۔۔۔کو بتا دیا کہ ۔۔۔۔۔۔۔غیرت مسلم ابھی زندہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔!!! آپ کو 1929ء کو سزائے موت سنائی گئی۔۔۔۔۔۔اور آپ کے جسد خاکی کو ۔۔۔۔۔۔۔۔ مثالی اور غیر معمولی اعزاز و اکرام کے ساتھ لاہور میں سپرد خاک کر دیا گیا اس موقع پر شاعر مشرق حضرت علامہ محمد اقبال رحمہ اللہ نے ایک مشہور فقرہ کہا جو تاریخ کاحصہ بن گیا۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭اسی گلاں کردے رہ گئے تے ترکھاناں دا منڈا بازی لے گیا٭ آج دنیا آپ کو غازی علم دین شہید رحمہ اللہ کے نام سے جانتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عالم اسلام کی تاریخ میں آپ کا نام ناموس رسالت ﷺ کے پاسبانوں کی فہرست میں ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

جگہ براۓ اشتہار

جگہ براۓ اشتہار