منطق

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ * لا الہٰ الا اللہ محمّد رسول اللہ * قُلْ هُوَ اللّـٰهُ اَحَدٌ - اَللَّـهُ الصَّمَدُ - لَمْ يَلِدْ وَلَمْ يُوْلَدْ - وَلَمْ يَكُنْ لَّـهٝ كُفُوًا اَحَدٌ

2017-06-13 03:50:59    51 Views خلافت یا جمہوریت  /  محمد اسحاق قریشی

خلافت یا جمہوریت

خلافت یا جمہوریت۔۔۔۔۔فیصلہ آپ کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
خلافت عثمانیہ کا دور ہے ۔۔۔۔۔تخت خلافت پر سلطان عبد الحمید  خان متمکن ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
یہ وہ دور ہے کہ مسلمانوں میں انتشار اور آپس کے اختلافات کے باعث۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امت مسلمہ ناچاقی کا شکار ہے ۔۔۔۔۔۔اس کے باوجود خلافت کی ڈور میں سبھی بندھے ہیں ۔۔۔۔۔
 اس وقت دنیا پر انگریز کی حکومت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔قصر خلافت میں خبر ملتی ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فرانس اور برطانیہ۔۔۔۔۔ جو کہ اس وقت دنیا کی طاقتور ترین ۔۔۔۔
حکومتیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مسلمانوں کی جان سے بھی عزیز ہستی۔۔۔۔
محمد رسول اللہ ﷺ کی شان اقدس میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گستاخانہ  ڈرامہ بنا رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس کو یورپ کے تمام۔۔۔تھیٹروں میں پیش کیا جانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ خبر ملتے ہی۔۔۔۔۔۔خلیفتہ المسلمین  سلطان عبد الحمید خان غضبناک ہو جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔
اپنی تمام فوج کو ۔۔۔۔۔۔عسکری تیاریوں کا حکم دیتے ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عسکری لباس میں ملبوس رہنے کا حکم صادر فرماتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 اور خود بھی عسکری لباس زیب تن کر کے ۔۔۔۔۔۔۔ہتھیاروں کو جسم پر آویزاں کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔
اسی غضب کے عالم میں ۔۔۔۔۔۔۔ فرانسیس سفیر کی طلبی ہوتی ہے،،،،،،،،،،
 سفیر یہ سوچتا ہے کہ ۔۔۔۔۔۔شاید خلیفتہ المسلمین۔۔۔۔۔۔حکومت فرانس کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 کوئی مذمتی بیان دیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔(موجودہ دور کے غداران اور ننگ دین وملت حکمران نما کٹھ پتلیوں کی طرح)
 اور ڈرامے کے موضوع پر ۔۔۔۔۔بات چیت ہو گی۔۔۔۔۔۔۔اور ہم ڈرامہ پیش کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے،،،،،،
مگر جب وہ سفیر ۔۔۔۔۔۔۔۔قصر خلافت میں داخل ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو یہ دیکھ کر دنگ رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قصر خلافت کا ہر فرد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عسکری لباس میں ملبوس تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جب وہ خلیفتہ المسلمین کے دربار میں پہنچا۔۔۔۔۔۔ تو یہ دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔اس پر بجلی سی گر گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ خود خلیفہ عسکری لباس میں ہتھیار زیب تن کیئے بیٹھے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
اس سفیر نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرد مومن کی ہیبت سے مغلوب ہو کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فوراََ کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے آقا! آپ کا پیغام مل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 اس کے بعد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس سفیر نے ۔۔۔۔۔۔حکومت فرانس کو فوراََ لکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 کہ یہ ڈرامہ بند کر دو۔۔۔۔۔۔۔۔۔! ورنہ اس کے نتائج ۔۔۔۔۔۔۔سہنے کی ہم میں طاقت نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 حکومت فرانس تفصیلات معلوم ہونے پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس گستاخانہ ڈرامے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔روکنے پر مجبور ہو گئی۔۔۔۔۔۔
 ایسا ہی پیغام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔برطانیہ کو دیا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر ۔۔۔۔۔۔۔وہ ٹکٹوں کی فروخت کا بہانہ بنانے لگا۔۔۔۔۔۔۔
اس پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خلیفتہ المسلمین سلطان عبد الحمید خان نے قصر خلافت سے ،،،،،،،،،،،،
 برطانیہ کے خلاف اعلان جہاد کرتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی تلوار ننگی کر لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 اور قسم کھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ یہ تلوار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس وقت تک نیام میں نہیں آئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جب تک برطانیہ و یورپ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے ان گھناؤنے ارادوں سے باز نہیں آ جاتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

سلطان عبد الحمید خان کے اس اقدام پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پورا یورپ تھرا اٹھا،،،،،،،،،،،،،،،!!!

اور انہوں نے خلیفتہ المسلمین سلطان عبد الحمید خان سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فوراََ اپنے ان غلیظ اور گھناؤنے عزائم کی معافی طلب کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

آج بھی پورے یورپ کی طرف سے سیدالکونین، امام الانبیاء، محبوب خدا، فخر موجودات ، وجہ تخلیق کائنات حضرت محمد ﷺ کی شان اقدس میں گستاخیوں کا سلسلہ جاری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 آج بھی امت مسلمہ کو ایک ایسے لیڈر کی ضرورت ہے جو مغرب کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر للکار سکے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 آج بھی امت مسلمہ ایک صلاح الدین ایوبی کی منتظر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔جو گستاخ رسول ﷺ ریجی نالڈ کا سر قلم کر دے۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 آج بھی امت مسلمہ سلطان عبد الحمید خان کی منتظر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کی ایک دھاڑ پر یورپ تھرا اٹھے ۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 آج امت مسلمہ کو اپنے نام نہاد بکاؤ اور یہود و نصاری کے تلوے چاٹنے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیڈروں کے مذمتی بیانوں کی نہیں ،،،،،،،،
 بلکہ غازیان ناموس رسالت کی ضرورت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ جو ہر گستاخ کا سر قلم کرنے کی جرات اور حوصلہ رکھتے ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

کی محمدﷺ سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں ۔۔۔!!!
 یہ جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیرے ہیں ۔۔۔۔۔!!!

جگہ براۓ اشتہار

جگہ براۓ اشتہار